Padash by Muskan Baloch Urdu Afsana

افسانہ: پاداش

بقلم:مسکان بلوچ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فاطمہ بالکنی میں کھڑی تھی جب ان کے سامنے والے گھر کی کھڑکی کھلی اور ایک لڑکی کھڑکی سے جھانک کے نیچے کھڑے لڑکے سے بات کرنے لگی۔۔۔

فاطمہ کو یہ دیکھتے ہی بہت کچھ یاد آیا تھا با مشکل بہتے آنسوؤں پہ قابو پاتی واپس روم میں آ کے بیڈ پہ لیٹ کے آنکھیں موند دی پر اب وہ جانتی تھی کہ چاہ کے بھی وہ کچھ اور نہیں سوچ پائے گی تلخ ماضی کہیں نا کہیں یاد آجاتا ہے۔۔۔ایک بار پھر ماضی کی تلخ یادوں نے اسے جکڑ لیا ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں تمہارے بغیر نہیں رہ سکتی فاتح میں مر جاؤں گی پلییز میرے ساتھ ایسا نا کرو میں کیسے جیونگی تمہارے بغیر بتاؤ ؟؟؟

فاطمہ فاتح کے سامنے کھڑی بہتے آنسوں کے ساتھ پوچھ رہی تھی۔۔۔

میں جانتا ہوں فاطمہ تم میرے بغیر نہیں رہ سکتی میں بھی تمہارے بغیر نہیں رہ سکتا پر میں کیا کروں میری فیملی نہیں مان رہی میں مجبور ہوں۔۔

بے زار صورت بنائے وہ بولا۔۔۔

جب تمہیں پتا تھا کے تمہاری فیملی نہیں مانےگی تو مجھ سے محبت کا جھوٹا ناٹک کیوں کیا ؟ میری زندگی کیوں برباد کی ؟؟ بولو جواب ہے تمہارے پاس _نہیں نا ہوگا بھی کیسے تم نے تو سوچا ہوگا چلو ٹائم پاس کر لیتے ہیں پر تمہیں کیا پتا کے تم جیسے لڑکے اپنا ٹائم پاس کرنے کے لئے لڑکیوں کے زندگی تباہ کرتے ہو۔۔۔۔

نہیں فاطمہ ایسا نہیں ہے تم غلط سوچ رہی ہو میں تم سے محبت کرتا ہوں میں تمہارے بغیر ایک پل نہیں رہ سکتا تمہیں لگتا ہے صرف تم تکلیف میں ہو ایسا نہیں ہے مجھے بھی اتنی ہی تکلیف ہو  رہی ہے۔۔۔پر میں بے بس ہوں۔۔۔

ہاہاہا_ تم مجھ سے محبت کرتے ہو ہاہا آج کی۔ تاریخ میں سب سے شاندار لطیفہ_ تمہیں تو محبت کا مطلب بھی نہیں پتا کوجا کے محبت کرنا۔۔۔محبت میں مجبوری نہیں ہوتی تم نے تو اپنی فیملی سے بات تک نہیں کی تم انھیں مناتے وہ مان جاتے کونسے ماں باپ ہوتے ہیں جو اپنی اولاد کی خوشی نہیں چاہتے تم ایک بر کہہ کے تو دیکھتے۔۔

“فاطمہ بات سنو تم” فاتح نے اگے بڑھ کے کچھ کہنا چاہا فاطمہ نے ہاتھ اٹھا کے روک دیا

“بسس بہت ہوگیا” تمہیں میں بھول نہیں سکتی کیوں کے میں نے محبت کی ہے تم سے تم نے نہیں کی تو کیا ہوا میری محبت تو سچی تھی” میں تمہیں بد دعا تو نہیں دے سکتی_پر مکافاتِ عمل کا وعدہ اللہ‎ نے کیا ہے تو میں یہ معملہ اللہ‎ پہ چھوڑتی ہوں ۔۔۔۔ اللہ‎ کی پکڑ بہت سخت ہے۔۔
مکافات عمل اٹل ہے دیر ہوسکتی ہے لیکن اس سے بچ نہیں سکتےجو ازیت تم نے مجھے بخشی وہ تو وقتی ہے لیکن تمہیں ساری عمر حساب دینا ہے۔

“اللہ‎ حافظ”

فاطمہ کہتی بہتے آنسوؤں کے ساتھ چلی گئی۔۔۔

ہاہاہا مکافاتِ عمل بڑی آئی۔۔۔۔فتح ہنستے ہوۓ موبائل نکال کے اپنی کسی گرل فرینڈ کو کال کرنے لگا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

“فاطمہ” فرسٹ ایئر کی سٹوڈنٹ تھی اس کا کالج گھر سے کچھ ہی دوری پر تھا اس لئے وہ پیدل ہی جاتی تھی۔۔۔
ایک دن فاتح نام کے لڑکے نے اسے بیچ سڑک پہ روک کر اظہارِ محبت کیا تھا۔۔۔۔وہ فاطمہ کے گھر کے سامنے والے گھر میں رہتا تھا اور فاطمہ کو وہ اچھا بھی لگتا تھا۔۔۔پہلے دن تو اس نے کچھ نہیں کہا پر مسلسل اس کی پیار بھری باتوں کی وجہ سے فاطمہ پگھل گئی اور اس سے رابطہ شورع کر دیا۔۔۔پہلے تو وہ ٹیکسٹ پہ بات کرتے رہے پھر کال پہ پچھلے ایک سال سے وہ اس سے رابطے میں تھی۔۔۔فاتح نے ہر طرح سے فاطمہ کو یقین دلایا تھا کے وہ اسے شادی کرے گا فاطمہ اسے روز کہتی تھی کے وہ اپنے گھر بات کرے پر ہمیشہ وہ اسے ٹال دیتا تھا۔۔۔کچھ دن پہلے فاطمہ کے لئے بہت اچھا رشتہ آیا تھا اس کے پیرنٹس ہاں کرنے کا سوچ رہے تھے۔۔۔۔فاطمہ نے فاتح کو بتایا تو اس نے کہا میں ابھی بات نہیں کر سکتا اپنی فیملی سے وہ نہیں مانےگے مجھے وقت چاہیے فاطمہ یہ سنتے ہی اس کے گھر چلی جاتی ہے اور فاتح اس کو صاف کہہ دیتا کے وہ شادی نہیں کر سکتا۔۔
فاطمہ روتے ہوۓ گھر آتی ہے اور ماں کو شادی کے لئے ہاں کہہ دیتی ہے۔۔۔ایک ماہ بعد ہی اس کی شادی ہو جاتی ہے احمد سے ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شادی بہت دھوم داھم سے ہوتی ہے۔۔۔۔

رات کے ایک بج رہے تھے فاطمہ دلہن کے جوڑے میں سجی احمد کے روم میں بیٹھی اس کا ویٹ کر رہی تھی۔۔۔
بہت مشکل سے اپنے آنسوؤں پہ بندھ باندھا تھا_ میں نے کبھی سوچا بھی نہیں تھا کے میں تمہارے علاوہ کسی اور کی دلہن بنوں گی کتنے ارمان تھے میرے سب تم نے مٹی میں ملا دیے۔۔۔۔

وہ سوچ رہی تھی جب دروازے کا لاک کُھلا اور احمد اندر آیا۔۔۔۔وہ بہت نروس تھا۔۔۔وہ فاطمہ کے ساتھ آ کے بیٹھ گیا اور اس کے ہاتھ تھام لئے جب کے فاطمہ جو کب سے ضبط کیے بیٹھی تھی احمد کے ہاتھ پکڑنے پہ ضبط کھو بیٹھی اور اس کی آنکھوں سے آنسو رواں ہو گئے۔۔
احمد نے بوکھلا کے اس کے ہاتھ چھوڑ دیے۔۔۔۔

“کیا ہوا رو کیوں رہی ہو” احمد پریشانی سے پوچھتا ہے۔۔۔

مجھے آپ کو کچھ بتانا ہے وہ سننے کے بعد آپ کی مرضی کے مجھے رکھیں یا چھوڑ دیں میں آپ کو دھوکہ نہیں دے سکتی اپنی زندگی کی اتنی بڑی بات چھپا نہیں سکتی۔۔۔
فاطمہ روتے ہوۓ احمد سے کہتی ہے۔۔ احمد سنجیدہ ہو کے کہتا ہے

“کہو میں سن رہا ہوں”
فاطمہ اس سے اپنے اور فاتح کے بارے میں سب بتاتی ہے_اپنی بات ختم کر کے احمد کی طرح دیکھا جو سپاٹ چہرے کے ساتھ اسے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔

احمد نے نور کی ساری بات تحمُل سے سنی پھر گویا ہوا۔۔

دیکھو فاطمہ وہ سب تمہارا پاسٹ تھا تم نے نادانی کی کوئی بات نہیں_تمہارے پاسٹ سے مجھے کوئی سروکار نہیں تمہارے ماضی میں تمہارے ساتھ جو بھی ہوا اسے بھول جاؤ  آج سے میرے ساتھ ایک نئی شروعات کرو۔۔۔۔اور مجھے خوشی ہوئی کے تم نے مجھ سے. کوئی جھوٹ نہیں بولا بلکے سچ بتا دیا۔

فاطمہ جو سوچ رہی تھی کے ابھی وو اس سے گھر سے نکال دے گا اس کی اس بات پہ حیرانی سے دیکھنے لگی۔۔۔

“نظر لگانے کا ارادہ ہے” ؟؟؟

احمد اسے یوں تکتا دیکھ کے شرارت سے بولا۔۔۔

فاطمہ نے شرم سے آنکھیں نیچے کر دی۔۔۔

“اوہ ہاں یہ تو میں بھول گیا” احمد نے اپنی جیب سے ایک خوبصورت بریسلیٹ جس کے بیچ میں “FA” بہت خوبصورت انداز میں لکھا تھا فاطمہ کے ہاتھ تھامتے ہوئے پہنا دیا۔۔۔

آج سے ہم دونوں کی نئی زندگی کی شروعات ہے ٹھیک ہے فاطمہ؟؟

“جی ٹھیک ہے”شرم سے لال ہوتے چہرے کے ساتھ کہتی ہے۔۔۔۔
چلو اب سو جاؤ فاطمہ چینج کر کے بیڈ کے ایک سائیڈ پہ لیٹ جاتی ہے احمد دوسری سائیڈ پہ آنکھیں موندے لیٹا تھا۔۔۔

کتنی خوش قسمت ہوں میں کے مجھے احمد جیسا ہمسفر ملا۔۔۔۔اب میں ان کی ہوں اور مجھے صرف ان کو سوچنا ہے کسی فاتح کو میں نہیں جانتی۔۔۔اللہ‎ جی آپ پلیز میرے دل سے اس کو نکال کے ان کی محبت ڈال دیں۔۔فاطمہ سوچتے سوچتے نیند کی وادیوں میں کھو گئی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پتا نہیں اب کہاں ہوگا کس حال میں ہوگا کیا اب بھی وہ اپنے ٹائم پاس کے لئے لڑکیوں کی زندگی تباہ کر رہا ہوگا یا اس کو سبق مل گیا ہوگا؟؟

“ماما”
فاطمہ جو ماضی کی تلخ یادوں میں کھوئی تھی مشال کے بولنے پہ اٹھ بیٹھی۔۔۔

“جی ماما کی جان”فاطمہ نے اپنی دو سالہ بیٹی کو گودھ میں اٹھا کے کہا۔۔۔

“آپ لو کیوں لاہی ہو” مشال نے اپنی توتلی زبان میں فاطمہ کے بہتے آنسوں صاف کرتے ہوۓ پوچھا۔۔

ماما رو نہیں رہی مشی یہ تو خوشی کے آنسو ہے ماما کتنی لکی ہیں نا جو آپ جیسی پیاری سی گڑیا اور احمد جیسے ہمسفر ملے۔۔۔فاطمہ نے اپنے آنسو صاف کرتے ہوۓ کہا مشی کے تو کچھ پلے نہیں پڑا تو اپنا سر فاطمہ کے کندھے پہ رکھ دیا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس دن فاطمہ کے جانے کے بعد فاتح اپنی کسی گرل فرینڈ سے ملنے جا رہا تھا کے روڈ کراس کرتے ہوۓ اس کا ایکسیڈنٹ ہوا۔۔۔پیروں پہ شدید چوٹ آنے کی وجہ سے اس کے دونوں پیر کاٹ دیے گئے تھے۔۔۔سر پر بھی بہت چوٹ آئی تھی ایک سال وہ کومہ میں رہا۔۔۔
ایک سال بعد وہ گھر واپس آیا.۔۔۔
تم نے سہی کہا تھا فاطمہ اللہ‎ کی پکڑ بہت سخت ہوتی ہے دیکھو میرے گناہ کی سزا مجھے اسی دن مل گئی۔۔۔میں ہنسا تھا کے مکافاتِ عمل نہیں ہوگا پر اتنی جلدی ہو جاےگا پتا نہیں تھا۔۔۔ویسے اچھا ہوا میرے ساتھ میں اسی کا حق دار ہوں میں بہت گناہگار ہوں میرے گناہوں کی سزا ہے یہ۔۔۔بس اب اللہ‎ سے یہی دعا ہے کے تمہیں زندگی کی تمام خوشیاں ملیں تمہاری زندگی میں کبھی کوئی دکھ نا آئے  تمہارے حصّے کے سارے غم میرے حصّے میں آئیں۔۔۔تمہارے لبوں سے کبھی مسکان جدا نا ہو۔۔۔ تین سال ہوگئے تم پتا نہیں کہاں ہو کیا تم نے مجھے بھلا دیا اچھا کیا کے بھلا دیا مجھ جیسوں کو کون یاد رکھتا ہے؟ بس آخری بار تم سے ملنا چاہتا ہوں معافی مانگنا چاہتا ہوں پتا نہیں میرے نصیب میں ہوگی بھی یا نہیں تم سے معافی مانگے بغیر میں مرنا نہیں چاہتا۔۔۔
وہ بالکنی میں بیٹھا فاطمہ کے گھر کو تکتا سوچ رہا تھا۔۔اب تو وہ اس کا معمول بن گیا تھا یہاں گھنٹوں بیٹھ کے فاطمہ کے بارے میں سوچنا۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فاتح کے دوست کی آئس کریم شاپ تھی جس میں فاتح اکثر جایا کرتا آج بھی وہ شاپ پہ بیٹھا تھا جب کوئی جانی پہچانی آواز آئی۔۔۔

“بھائی ایک مینگو فلیور کی آئس کریم دینا”

فاتح نے سر اٹھا کے دیکھا تو وہ کوئی اور نہیں فاطمہ تھی جو آئس کریم کا کہہ کر اب ایک چھوٹی سی لڑکی کو گودھ میں اٹھا رہی تھی۔۔

فاطمہ مارکیٹ آئی تھی اب مشال نے آئس کریم کھانے کی ضد کی تو وہ ایک شاپ پہ آئس کریم لینے آگئی وہ مشال کو گودھ میں اٹھا کر سیدھی ہوئی جب سامنے وہیل چیئر پہ بیٹھے وجود پہ نظر پڑی فاطمہ کا تو سانس روک گیا ایسا ہی حال فاتح کا بھی تھا۔۔۔دونوں بت بنے ایک دوسرے کو دیکھ رہے تھے جب مشال نے تالیاں بجائی فاتح کے دوست نے مشال کے ہاتھ میں آئس کریم دے دی تھی فاطمہ نے پیمنٹ کر کے جانے کے لئے موڑی جب فاتح کی بھیگی آواز نے اس کے قدم جکڑ لئے۔۔۔

“فاطمہ میری بات سن لو پلیز” فاتح کہتا اپنی وہیل چیئر گھسیٹتا باہر فاطمہ کے سامنے آ گیا۔۔۔

کچھ دیر خاموشی سے ایک دوسرے کو دیکھتے دونوں آنسو بہاتے رہے۔۔۔پھر فاتح نے بولنا شروع کیا۔۔

دیکھو فاطمہ مجھ کو میرے جرم کی پاداش مل گئی۔۔۔اور اسی دن ملی۔۔۔۔ تمہارے جانے کے بعد میں ایک سال تک کومہ میں رہا دیکھو اب تو میرے پیر بھی نہیں ہے۔۔۔تم نے ٹھیک کہا تھا اللہ‎ کی پکڑ بہت سخت ہے۔۔۔میں بہت تکلیف میں ہوں فاطمہ پلیز تم مجھے معاف کر دو جب تک تم مجھے معاف نہیں کروگی اللہ‎ بھی مجھے معاف نہیں کرے گا_ مجھے معاف کر دو تا کے میں سکون سے مر سکوں۔۔۔

فاتح روتے ہوۓ التجا کر رہا تھا۔۔۔

فاطمہ سے یہ دیکھا نا گیا وہ یہ سب تو نہیں چاہتی تھی اس نے یہ کبھی نہیں چاہا تھا اتنی۔۔۔

فاتح میں نے تو تمہیں اسی دن معاف کر دیا تھا میں نے کبھی یہ نہیں چاہا تھا کے تمہارے ساتھ ایسا ہو۔۔۔میں نے تو سوچا بھی نہیں تھا تمہارے ساتھ یہ سب ہوگا۔۔۔۔

میرے ساتھ اچھا ہوا اگر ایسا نا ہوتا تو اب تک میں کتنی لڑکیوں کی زندگیاں تباہ کر چکا ہوتا۔۔۔بس تم مجھے ایک بار معاف کر دو تا کے میں سکوں سے مر سکوں پلیز ایک بر کہہ دو کے تم نے مجھے معاف کیا۔۔۔

فاتح روتے ہوۓ فاطمہ کے سامنے ہاتھ جوڑ کے کہتا ہے۔۔

میں نے تمہیں معاف کیا فاتح اس کے لئے جو تم نے میرے ساتھ کیا۔۔۔

فاطمہ یہ کہتے وہاں سے چلی گئی۔۔۔

ختم شد

One Response

  1. Zohaib Qadeer May 1, 2020

Leave a Reply