Sanwali By Momal Aarain Urdu Afsana

Sanwali by Momal Aarain is Urdu Afsana and is very interesting Urdu collection written by very talented Momal Aarain who is famous Urdu Novels Writer and written many Urdu columns and novels..

Sanwali is Reality based Urdu Afsana and it is a story about social topic and very common issue Avidity that ruins many of the relations and sometime one becomes own enemy. Read here complete story and learn what happened next.. Very Romantic Urdu Novel that you will love reading.

About Momal Aarain

Momal is young talented writer who has started to write early in 2018 from Poetry. She has written in many topics and got very much appreciation from her column Aankh Aur Aansoo. Here you are going to read another masterpiece.

افسانہ : سانولی
از قلم : مومل ارائیں

میں نایاب رحمان تھک گئی ہوں
بارہا پکار پکار کہ _ میری اداسیاں ہیں کہ ختم نہیں ہوتیں_ مجھے جینا ہے__ لفظ جینا پہ آنسو گرا ہوا تھا

کیا میں پاگل ہوگئی ہوں؟؟ کیا مجھے کوئ اس پاگل پن سے نکالے گا نہیں ؟ بے تحاشہ اشک جا بجا بکھرے ہوئے تھے

میں بیچ صحرا میں آن کھڑی ہوئی ہوں، کوئ میری طرف چاہ کر بھی متوجہ نہیں ہوتا_ مجھے اس صحرا سے نکلنا ہے__ نیچے کونے میں ایک پچی روتی ہوئی بنائ ہوئ تھی

میرے جذبات دم توڑ رہے ہیں_ مجھے اندھیری راتیں اچھی لگنے لگی ہیں_ مجھے خوشیاں راس نہیں_ آنسو ہی آنسو ہر جگہ لڑکھڑا رہے تھے

میرا دم نکلتا جا رہا ہے_ کوئ چیز کوئ خلش ایسی ہے جو مجھے جینے نہیں دیتی_ میں نا جانے کیا چاہتی ہوں_ کونے میں ایک اداس چہرہ بنا ہوا تھا

میرے ماں باپ مجھ سے انجان رہے انہیں میری ہنسی کے پیچھے چھپے آنسو کبھی نا دکھے اب بس جیا نہیں جاتا شاید میں خود کو ماردونگی_ نیچے کونے میں ایک قبر اور بے تحاشہ آنسو تھے

میں چلاتی جاتی ہوں اندھیریی راتوں میں پکارتی ہوں سب کو_ مگر کوئ ایک بھی میری طرف نہیں مُڑتا_ اشکوں کی برسات ہوئ تھی

میں بہت زیادہ کالی ہوں نا! تبھی سب میرا مذاق اُڑاتے ہیں_ کوئ مجھ سے پیار نہیں کرتا _ سب دھوکے باز ہیں_ نیچے کالے رنگ سے ایک لڑکی بنائ ہوئ تھی

پیر میں چھالے پڑھ چکے ہیں، تہمتوں کے انگاروں پہ چلتے اب لہو مکمل ختم ہوچکا ہے_ لال رنگ سے خون دکھایا ہوا تھا اور آنسو ہی آنسو پھیلے ہوئے تھے

نا جانے کب تک مجھے دھتکارا جاۓ گا_ میرا کوئی بھی نہیں ہے_ میں کیا خالی اک کٹھ پتلی ہوں؟ ایک کٹھ پتلی جسے زنجیر سے باندھا ہوا تھا_ کونے میں بنی ہوئی تھی

بے تحاشا درد ہے سینے میں یوں لگتا ہے اب مر جاؤنگی__ درد سے آنکھیں پھٹ رہی ہیں_
ایک آنکھ آنسو بہاتی ہوئ بنی ہوئی تھی

آخر مجھے موت کیوں نہیں آتی!! مجھ سے اور سہا نہیں جاتا __ آنسو ہی آنسو ہر جگہ بِچھے ہوئے تھے

میں جینا چاہتی ہوں_ کوئ آس کوئ امید ہو کہ میں جی اُٹھوں__ نیچے ایک گلابی پھول
بنایا ہوا تھا

آخر میرے بہن بھائیوں کو مجھ سے زیادہ اہمیت کیوں ملتی ہے؟؟ کیوں کسی کو میں نہیں دکھتی__ ایک بچی روتی ہوئی بنی ہوئی تھی

آج میں عرصے بعد خوش ہوں_ مجھے آج جاب مل گئی ہے!! اب میں خود کو ثابت کر دکھاؤنگی_ ایک احد اک جذبہ ظاہر تھا_ اور کونے میں ایک مسکراہٹ جھلک رہی تھی

مجھے لوگوں سے ڈر لگتا ہے_ کاش میں جاب نا کرتی مجھے تو اندھیرا پسند ہے_بھیڑ میں پھنسی ایک لڑکی بنی ہوئی تھی

یہ کیا ہوگیا ہے آخر کیوں میں اپنی یادوں سے پیچھا نہیں چھڑا پاتی__ آنسوؤں کی بونچھاڑ ہوئ وی تھی

اب دنیا سے مجھے شکوے نہیں ہیں _ میں بہت خوش رہنے لگی ہوں __ کونے میں ایک دل بنا ہوا تھا

اب میں ہمیشہ خوش رہونگی_ ہمیشہ !! کاش اب مجھے تا عمر موت نا آئے_ میں خود کیلئے جینا چاہتی ہوں! کچھ حرف مٹے ہوئے تھے شاید خوشی کے آنسوؤں سے_ کونے میں ایک مسکراہٹ بھری لڑکی بنائ گئی تھی

اک ورق اور پلٹا مگر، اس ڈائری کے باقی سارے ورق سفید ان چھوئے تھے__ جہاں کچھ نا لکھا گیا تھا اور نا ہی بنایا گیا تھا_

***

رحمان علی کی آنکھوں سے بے تحاشہ آنسو اُمڈتے جارہے تھے_ کاش وہ اپنی سب سے بڑی بیٹی کو توجہ دے پاتے _ کاش ان سے انکی سانولی بیٹی نظر انداز نا ہوتی_
ندامت تھی خود کے کیے برتاؤ کی_ وہ زارو قطار رونا چاہتے تھے_
کچھ دن قبل وہ جس بیٹی کو اپنے ہاتھوں سے دفناکے آئے تھے_ وہ اس قدر اذیت کا شکار تھی _ ان کا دل اس قرب کو سوچتے پھٹا جارہا تھا_ کاش کے کبھی وہ سینے سے لگ کے انہیں اپنے نظر انداز ہونے کی اذیت بتا دیتی_ کاش کہ ان کا دل اس کی طرف متوجہ ہوجاتا_ کاش کہ وہ اس کے مرنے سے پہلے اس کی ڈائری پڑھ لیتے_
مگر اب ان آنسوؤں کا کوئی فائدہ نہیں تھا_
وہ کاش اب کاش ہی ہو چکا تھا_
ان کی سانولی رنگ کی بیٹی نایاب رحمان دل کا دورہ پڑنے سے،
دنیا سے محض اکیس سال کی عمر میں رخصت ہوچکی تھی_
****

نایاب رحمان ہر روز رات کے تین بجے اپنی ڈائری میں چند لفظ لکھنے کی عادی تھی_ بچپن سے ہی اپنے سانولے رنگ کی بدولت وہ ہمیشہ نظرانداز ہوتی گئی تھی_
وہ ذہنی طور پہ مایوس ہوچکی تھی_ شاید ڈپریشن کا شکار ہوچکی تھی_
شروع سے لے کر _ اس کی بہترین ساتھی اس کی ڈائری ہی تھی جہاں اس کا ہر لفظ چلاتا تھا_ جہاں اس کا ہر آنسو بہتا تھا_
وہ جینے کی آرزو رکھتی تھی مگر نا امید تھی_
اور جب خوشیاں اس کے دامن میں پھینک دی گئیں تو _ موت کا فرشتہ اس کی روح قبض کرنے کھڑا تھا__ آکھری بار ڈائری میں ہمیشہ خوش رہنے کا احد کر کے جب نایاب رحمان سوئ تھی_
رات کے کسی پہر دل کا دورہ پڑنے کے باعث وہ دنیا فانی سے کوچ کرگئی تھی_

ختم شُد

Pari by Momal Aarain Complete NovelMomal Aarain is famous for her unique writing style. Also, she has written many Novels before the one you are going to read. She started writing early in 2018 and since then completed her writing journey successfully.

Also Read Here Husna By Huma Waqas

Also Read Pari By Momal Aarain Complete Novel

 

Download Urdu Novels PDF

Urdu Kitabain is wonderful place for urdu readers. If you are Novels and Book lovers, you are at right place where you can read famous Urdu Novels and download them on your device.

You can request us your favorite Urdu Novel which we can share with you on this page upon your request. Further we are providing a wonderful platform for those who like to write and have not started yet. contact us on our facebook page here.

One thought on “Sanwali By Momal Aarain Urdu Afsana

  • May 9, 2020 at 5:59 pm
    Permalink

    Boht hi kmaaal dear. Agr hm kisi bchy ko aisy ignore kry gy to wo aisy hi apna drd chupa chupa k jeeta hy or sirf khuda se usy share krta hy kbi b kisi ko us k rang nasal ki wja se aisy irritate na kry. Sb khuda ki takhleeq hy hm us insan me nai balky us khaliq me nuks nikal rhy hoty hy

    Reply

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *